Breaking News
Home / پاکستان / اس رقعے میں کیا لکھا تھا ؟

اس رقعے میں کیا لکھا تھا ؟

لاہور (ویب ڈیسک) پاکستان میں نشان حیدر کا اعزاز پانے والوں میں سے نو کا تعلق پاکستان کی بری فوج جبکہ ایک کا پاکستانی فضائیہ سے ہے۔وزارت دفاع کے حکم پر ‘پاکستان مِنٹ’ (وہ جگہ جہاں سِکّے بنائے جاتے ہیں) نشان حیدر تیار کرتی ہے۔نشان حیدر پانے والوں میں سے کیپٹن کرنل

شیر خان کی بہادری و شجاعت کا اعتراف ایک ناقابل یقین اور ناقابل تصور ذریعے سے سامنے آیا تھا۔کیپٹن کرنل شیر خان کو کارگل میں اپنے دستوں کے ساتھ قیادت اور معرکہ آرائی کرتے دیکھنے والے بھارتی بریگیڈئیر نے بعد ازاں بھارتی میڈیا سے اپنے انٹرویو میں یہ دعویٰ کیا تھا کہ انہوں نے کیپٹن کرنل شیر خان کی میت کی جیب میں ایک تعریفی رقعہ اس وقت لکھ کر رکھ دیا تھا جب کرنل شیر خان کا جسد خاکی پاکستان کی فوج کے حوالے کیا جا رہا تھا۔ اس رقعے میں تحریر تھا کہ کرنل خان نے بے حد بہادری دکھائی اور ان کی اس بہادری کا اعتراف ہونا چاہیے۔کیپٹن کرنل شیر خان کے معاملے میں تو واقعے کے عینی شاہد مخالف کمانڈنگ افسر نے رضاکارانہ طور پر ان کی بہادری کی گواہی دی ۔آپ کو بتاتے چلیں کہ نشان حیدر دشمن کے چھوڑے ہوئے یا اس سے بزور بازو حاصل کردہ ہتھیاروں کو پگھلا کر بنایا جاتا ہے جس میں 88 فیصد تانبا، 10 فیصد سونا اور 2 فیصد زنک (جست) شامل کیا جاتا ہے۔عوامی سطح پر اس قسم کی کوئی معلومات دستیاب نہیں کہ نشان حیدر پانے والوں کو مالی طور پر کیا فوائد دیے گئے تاہم ریٹائرڈ بریگیڈیئر فاروق حمید کے مطابق نشان حیدر کا اعزاز پانے والوں کے اہل خانہ کو پیشکش کی جاتی ہے کہ وہ چاہیں تو نقدی لے لیں یا زرعی اراضی۔نشان حیدر کا اعزاز بلالحاظِ عہدہ پاکستان کی افواج کے کسی بھی فرد کو دیا جا سکتا ہے اور یہ ضروری نہیں کہ یہ اعزاز صرف لڑائی میں جان قربان کرنے والوں کو دیا جائے،

Share

About admin401

Check Also

بڑی خبر:22 ستمبر کو عام تعطیل کا اعلان کر دیا گیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) جب بھی کسی سرکاری ملازم یا سکول کے بچوں کو سرکاری …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Powered by themekiller.com